شہر میں اب سانس کی نالی کے امراض میں بھی اضافہ

RushdaInfotech January 7th 2019 urdu-news-paper
شہر میں اب سانس کی نالی کے امراض میں بھی اضافہ

بنگلورو۔6جنوری(ف ن)ڈینگو اور دوسرے جرثومہ کے ذریعہ پھیلنے والے امراض کی ایک بڑی وبا کے بعد اب شہر گلستاں میں بخار اور سانس کی بالائی نالی کے انفیکشن کی شکایتوں میں شدید اضافہ دیکھا جا رہا ہے۔شہر کے ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس کی وجہ موسم میں اچانک پیدا ہونے والی تبدیلیاں اور شہر کی فضا میں الرجن اور پولن کی مقدار میں اضافہ ہے یعنی شہر کی آلودہ ہوا ان بیماریوں کو بڑھا رہی ہے۔شہر کے اسپتالوں میں نچلے اور بالائی نظام تنفس یا سانس کی نالیوں میں انفکشن ، وائرل بخار اور وائرل ارتھریٹس کے معاملات میں اضافہ دیکھا جا رہا ہے، کم از کم ہر دس میں سے چھ مریض گلے کی خرابی، بخار، زکام، کھانسی، الرجک برانکھائٹس، دمہ اور درمیانی کان کے انفکشن میں مبتلاء ہوتے ہیں۔ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اگر یہ مریض ابتداء ہی میں صحیح علاج نہیں کراتے اور احتیاط نہیں برتتے ہیں تو ان میں سے اکثر مریض کرونک ابسٹرکٹیو پلمنری ایر وے ڈسیز (سی او پی ڈی) میں مبتلاء ہو جاتے ہیں۔بنگلور میڈیکل کالج اور ریسرچ انسٹیٹیوٹ جو وکٹوریہ اسپتال سے جڑا ہوا ہے ، اس کے شعبہ برائے میڈیسن میں پروفیسر ڈاکٹر کے آر رویندرا نے بتایا کہ وائرل برانکھائٹس اور اس کے نتیجہ میں پیدا ہونے والا فلو کا مرض وبائی ہوتے ہیں ، اس موسم میں زیادہ تعداد میں لوگ ان امراض کا شکار ہو سکتے ہیں۔


Recent Post

Popular Links